Call Us Today! +92-321-5088855
kitabandqalam@gmail.com

اس ویب سائیٹ پر جو میری ذاتی تحریریں ہیں وہ میرے تجربات، مشاہدات اور خیالات پر مبنی ہیں۔ کسی اور کی کسی بھی قسم کی تحریر سے مطابقت محض اتفاقیہ ہو گی۔ ابن نیاز

آپ کو کوئی کتاب اپنے گھر بیٹھے 18 سے 25 فئصد ڈسکاؤنٹ پر چاہیے، تو رابطہ کریں۔ اسلامی کتابوں کا ڈسکاؤنٹ 18 فیصد ہے۔ مارکیٹ میں موجودگی شرط ہے. یہ تصویریں صرف مثال کے لیے ہیں۔

متفرق شاعری

صبح سویرے
July 9, 2019

خوبصورت سی صبح میں
خوب ہی خود کو کرتے ہیں
رب کا فضل وہ پاتے ہیں
جو صبح سویرے اٹھتے ہیں
ذکرِ خدا کو پورا کرکے
رزق پھر ڈھونڈنے نکلتے ہیں..
پرند چرند سب دیکھو
تسبیح رب کی کرکے سب
پھر چاروں اور وہ پھیلتے ہیں
توکل رب پر کرتے ہیں
لیکن محنت پھر بھی
ان کی سرشت میں شامل ہے
دانہ دنکا چگتے ہیں
گر بچے ہوں آشیانے میں
ان کا حساب بھی رکھتے ہیں..
رب کا فضل سب پاتے ہیں
جو رب پر توکل کرتے ہیں
اور محنت ک دم بھرتے ہیں..
صبح سویرے سورج کے سنگ
جو بھی چلتے جاتے ہیں..
خوب صورت سی صبح میں
خوب ہی خود کو کرتے ہیں..

**********

لمس
November 8, 2018

اک احساس سا ہر پل
سپردگی کا عالمِ حصار میں
میرے ساتھ رہتا ہے
کہ دعاؤں کا حصار
مجھے گھیرے رکھتا ہے..
میں وسیلۂ ظفر پر نکلوں
یا تلاشِِ رزق میں بھٹکوں
میرے ماتھے پہ
میری ماں کے بوسے کا
مقدس لمس
میرے ساتھ رہتا ہے..

سیاست
November 8, 2018

چور لٹیرے مل بیٹھے ہیں
چولی دامن ساتھ میں لے کر
باری باری تاش کے پتے
جوکر جوکر کرکے کھیلیں
شو کریں تو جیت نہیں
اور چھپائیں تو مات ہے کیسی
عدل کا پلڑا اس کا بھاری
َجس کے پیچھے دنیا ساری
کھیل ہے سارا لوٹوں کا
ہر اک بینگن پلیٹوں کا
رخ ہوا کا دیکھ کر چلتے
تیرے میرے سینے پر
مونگ کی دال وہ ہیں دلتے
کوئی نہیں ہے عام بندے کا
روحانی یا جسمانی مسیحا
جو بھی آئے لُوٹتا جائے
من بیاکل جان کر سب
ووٹ اسی کو پھر بھی پائے
اس قوم پر تف، لعنت اور ہائے

پہلی بارش سردی کی
November 8, 2018

پہلی بارش سردی کی
جب ماہ نومبر لوٹ آیا

گھس کر تم نے کمبل میں
یہ تو بتاؤ کیا کھایا

مونگ پھلی میں تو دانہ نہیں
سب نے یہی سبق پڑھایا

گڑ کی ڈلی میٹھی بہت
لیکن کڑوا گھول پلایا

ہنستے ہنستے آنسو جم گئے
اندر سے جب باہر آیا

ہر کانٹا اک ماضی کا
حال میں جب بھی یاد آیا

اعجازؔ کانام چاہت ہے
چاہت نے یہ سمجھایا

(اعجاز احمد لودھی)

مان
November 8, 2018

مان

کسی کو مان بہت ہے
کسی کا احسان بہت ہے
مجھ میں انا بہت ہے
انا پرستی میں ڈوبا ہوا ہوں
خودی میں میں خود کو تلاش رہا ہوں
محبت سے کسی نے عزت میں ڈبویا
کسی نے عزت سے مان ہے بڑھایا
کیسے کسی کا مان میں توڑوں
کسی کو کیسے میں آنسوؤں میں تولوں

******